سعودی عرب میں ملٹی پل ایگزٹ ری انٹری ویزے پر سفر، کیا ٹریفک چالان رکاوٹ بن سکتا ہے؟

ریاض (نیوز ڈیسک) سعودی حکام نے ملٹی پل ایگزٹ ری انٹری ویزے پر سفر کے لیے ٹریفک چالان کے رکاوٹ بننے کے حوالے سے وضاحت کی ہے۔ سعودی عرب میں مقیم غیر ملکیوں کو مملکت سے چھٹی پر جانے کے لیے ایگزٹ ری انٹری ویزہ جسے عربی میں خروج و عودہ کہتے ہیں جاری کیا جاتا ہے، خروج و عودہ ویزہ سنگل انٹری اور ملٹی پل انٹری دو طرح کے ہوتے ہیں۔

سنگل انٹری ویزے کی بھی دو کیٹگریز ہیں۔ جن افراد کے اقامے کی مدت 6 ماہ سے کم ہے انہیں دنوں کے حساب سے ویزہ جاری کیا جاتا ہے جبکہ وہ تارکین جن کے اقامے کی ایکسپائری مدت 6 ماہ سے زائد ہے انہیں 30، 60 اور 120 دن کے ویزے جاری کیے جاتے ہیں۔ ملٹی پل انٹری ویزے ایسے افراد کے لیے بہتر ہیں جو محدود مدت کے دوران متعدد بار بیرون مملکت سفر کرتے ہوں، ملٹی پل ایگزٹ ری انٹری ویزے کا مقصد زیادہ سفر کرنے والوں کو سہولت فراہم کرنا ہے تاکہ انہیں بار بار ویزہ حاصل نہ کرنا پڑے۔

خروج وعودہ کے حوالے سے محکمہ پاسپورٹ اینڈ امیگریشن جوازات کے مطابق خروج و عودہ دو طرح کے جاری کیے جاتےہیں، جن میں محدود مدت ہو وہ دنوں کے حساب سے جاری ہوتا ہے جبکہ دوسرا مہینوں کے حساب سے۔ سوال کا جواب دیتے ہوئے جوازات کا کہنا تھا کہ خروج و عودہ جو دنوں کے حساب سے جاری کیا جاتا ہے، اس کے مطابق اقامے کی آخری مدت تک کے لیے ایگزٹ ری انٹری حاصل کیا جا سکتا ہے۔

جہاں تک سوال کا تعلق ہے اس حوالے سے جوازات کا کہنا تھا کہ اس کیس میں دنوں کے حساب سے خروج وعودہ ویزہ جاری کروایا جا سکتا ہے۔ دنوں کے حساب سے جو خروج و عودہ جاری کیا جاتا ہے اس کا حساب یعنی کاؤنٹ ڈاؤن خروج و عودہ جاری ہونے کے ساتھ ہی شروع ہو جاتا ہے، ایگزٹ ری انٹری ویزہ جو دنوں کے حساب سے جاری کروایا جاتا ہے اس میں واپسی کی تاریخ کا اندراج کیا جاتا ہے۔

واپسی کی تاریخ کو مدنظر رکھتے ہوئے اس سے ایک دن قبل پہنچ جانا بہتر ہے، اگر مزید قیام کا ارادہ ہو تو اقامے میں توسیع کرنے کے بعد ایگزٹ ری انٹری کی مدت میں توسیع کروائی جاسکتی ہے۔ خروج و عودہ کی مدت میں توسیع کروانے کی کم از کم فیس 100 ریال ہے جو 30 دن کے لیے ہوتی ہے، جتنے دن توسیع کروائی جائے اسی اعتبار سے فیس جمع کروائی جائے گی تاہم فیس 100 ریال سے کم نہیں ہوتی۔

ایک اور سوال میں حکام سے پوچھا گیا کہ ملٹی پل ایگزٹ ری انٹری ویزے میں 3 ماہ باقی ہیں، کیا ٹریفک چالان سفر میں رکاوٹ بن سکتے ہیں؟ سوال کے جواب میں جوازات کا کہنا تھا کہ غیر ملکی کارکنوں کے لیے لازمی ہے کہ سفر سے قبل ان کے ریکارڈ پر کسی قسم کا واجب الادا چالان باقی نہ ہو۔