ایشیا کپ پر چھائے سیاہ بادل تیزی سے چھٹنے لگے

 کراچی (نیوز ڈیسک) ایشیا کپ پر چھائے سیاہ بادل تیزی سے چھٹنے لگے،آسٹریلیا سے تاحال کامیاب سیریز نے سری لنکا کے حوصلے بلند کر دیے اور وہ میگا ایونٹ کی میزبانی بچانے کیلیے بھی پْرامید ہے، آئی لینڈرز کو پاکستان سے ہوم ٹیسٹ میچز کے ساتھ لنکا پریمیئر لیگ بھی منعقد کرنا ہے، حکام ایشیائی شوپیس ایونٹ سے قبل تمام مقابلے شیڈول کے تحت ہونے کیلیے پْراعتماد ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سری لنکا کو حالیہ کچھ عرصے میں شدید معاشی بحران اور اس کے نتیجے میں ہونے والے عوامی مظاہروں کا سامنا رہا،اس کی وجہ سے وہاں پر ایشیاکپ کا انعقاد بھی غیر یقینی صورتحال سے دوچار ہو گیا تھا، گوکہ معاشی حالات اب بھی ابتر ہیں لیکن عوام کے غم و غصے میں کچھ کمی آنے سے پہلے جیسے احتجاجی مظاہرے نہیں ہورہے۔

آسٹریلوی کرکٹ ٹیم ان دنوں سری لنکا میں ون ڈے سیریز کھیلنے میں مصروف ہے، کولمبو اور پالے کیلی میں تین ٹوئنٹی 20اور 2ون ڈے میچز کا تاحال کامیاب انعقاد ہو چکا، ابھی مزید 3 ایک روزہ مقابلے اور2 ٹیسٹ کا انعقاد ہونا ہے، آسٹریلوی ٹیم کا دورہ12 جولائی کو ختم ہوگا۔

اب تک سیریز کے کامیاب میچز نے سری لنکن بورڈ کا حوصلہ بڑھا دیا اور وہ ایشیا کپ کا بھی شیڈول کے تحت انعقاد کرنا چاہتا ہے، ایگزیکٹیو کمیٹی کے ممبر سمانتھا ڈوڈنویلا نے کہا کہ تمام سیریز اور ٹورنامنٹس ہمارے ملک کیلیے بہت زیادہ اہمیت رکھتے ہیں کیونکہ ہمیں اس وقت زرمبادلہ کی ضرورت ہے۔ ہمیں امید ہے کہ آسٹریلوی ٹیم کا دورہ کامیابی سے مکمل ہوگا،اس سے میزبانی کے حوالے سے ہمارا کیس مضبوط ہو جائے گا۔

یاد رہے کہ کرکٹ آسٹریلیا نے اپنی حکومت کی جانب سے دورہ سری لنکا پر نظر ثانی کے مشورے پر بھی تمام فارمیٹس کیلیے ٹیم کو بھیجا،اس کے ساتھ اے ٹیم بھی ٹور پر آئی۔

سری لنکا کو پاکستان کی بھی ٹیسٹ سیریز کیلیے میزبانی کرنی ہے، پھر لنکا پریمیئر لیگ کا تیسرا ایڈیشن 31جولائی سے21 اگست تک ہوگا جبکہ اس کے بعد ایشیا کپ کھیلا جائے گا۔ ڈوڈنویلا نے کہا کہ لوگ سوال اٹھا رہے تھے کہ اس بحرانی کیفیت میں کیا ہم ٹورنامنٹ کا انعقاد کرسکتے ہیں تو ان کیلیے جواب یہی ہے کہ کرکٹ نے ہمیشہ ہی ملکی معیشت میں اپنا حصہ ڈالا، اس سے غیرملکی کرنسی ملک میں آتی ہے،اس بار بھی یہ تمام مقابلے ہماری معیشت کیلیے سود مند ثابت ہوں گے۔