اساتذہ کی کمی سے دوچار گورنمنٹ ڈگری کالج پروآ کے قائم مقام پرنسپل بھی ٹرانسفر، طلباء کا مستقبل شدید خطرے میں

پروآ (عامر لودھی) پہلے سے ہی اساتذہ کی کمی سے دوچار گورنمنٹ ڈگری کالج پروآ کے قائم مقام پرنسپل کو بھی ٹرانسفر کردیا گیا۔ طلباء کا مستقبل شدید خطرات سے دوچار ہوگیا ہے۔ ابوبکر نئیر قائم مقام پرنسپل کی زمہ داریاں نبھانے کے ساتھ ساتھ اپنی کلاسز بھی پڑھاتے تھے اور ایکسٹرا پیریڈ لے کر طلباء کے مستقبل کو بچانے کے لیے کوشاں تھے۔ یکے بعد دیگرے ٹیچرز کی ٹرانسفر کو روکنے کے لیے تحصیل چیئرمین کی ڈیڈ لائن اور طلباء کا احتجاج کام نہ آیا۔ جی ڈی سی پروآکے قائم مقام پرنسپل کی زمہ داریاں نبھانے والے اردو کے سینئر پروفیسر ابوبکر نئیر کو بھی گورنمنٹ ڈگری کالج پروآ سے گورنمنٹ ڈگری کالج نمبر 2 ٹرانسفر کر دیا گیا جس کے بعد پورے کالج میں ایک فوکل پرسن اور چار پروفیسر باقی رہے گئے ہیں۔

گورنمنٹ ڈگری کالج پروآ سے پروفیسرز کے مسلسل تبادلوں پر اسٹوڈنٹس سراپا احتجاج بن گئے تھے اور حکومت وقت کو تیس جون تک پروفیسر کی تعیناتی کا الٹی میٹم دیا مگر الٹی میٹم کی آخری تاریخ آنے سے پہلے ہی اُردو کے آخری پروفیسر اور قائم مقام پرنسپل کی زمہ داریاں نبھانے والے ابوبکر کو بھی ٹرانسفر کر دیا گیا ،طلباء اس پیچیدہ صورتحال میں شدید پریشانی کے عالم میں ہیں اور صوبائی و وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ کالج میں اساتذہ کی تمام مختص اسامیاں پر کی جائیں اور غیر ضروری تبادلے نہ کئے جائیں،ہمیں اپنا مستقبل تاریک نظر آرہا ہے ،متعلقہ حکام نے جلد اس کا نوٹس نہ لیا تو ہم شدیداحتجاج پر مجبور ہو جائینگے اور اساتذہ کی تعیناتیاں مکمل ہونے تک احتجاج کا یہ سلسلہ جاری رہیگا

اپنا تبصرہ بھیجیں